پیر، 22-اپریل،2024
( 12 شوال 1445 )
پیر، 22-اپریل،2024

EN

مریخ سے پانی کیوں غائب ہوا؟ ناسا نے وجہ بتادی

01 اپریل, 2024 17:12

مریخ یعنی مارس سے پانی غائب ہونے کی وجہ جاننے کے لیے امریکی خلائی ادارے (ناسا) نے نیا مشن شروع کردیا ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق ناسا کے کیوروسٹی روور نے مریخ پر گیڈیز ویلس چینل کے ذریعے اپنے سفر کا آغاز کر دیا ہے جس سے سائنس دانوں کو سیارے کے پانی سے بھرپور ماضی کی انوکھی جھلک دکھائی جا رہی ہے۔

اس حالیہ مہم کا مقصد مریخ کی سطح سے مائع پانی کے غائب ہونے کے ارد گرد کے رازوں سے پردہ اٹھانا ہے جس سے ممکنہ طور پر سرخ سیارے کی تاریخ کے بارے میں ہماری تفہیم کو نئی شکل ملے گی۔

اربوں سال پہلے مریخ زمین کے اپنے ماحول کی طرح زیادہ گرم اور نمی آب و ہوا کا حامل تھا۔ کیوروسٹی روور کا موجودہ مشن سانپ کی طرح کے گیڈیز ویلس چینل کے ذریعے مریخ کی تہہ میں گہری بنائی گئی اس قدیم وادی کے شواہد کو بے نقاب کرنے کی کوشش کرتا ہے۔

سنہ 2014 سے کیوروسٹی ماؤنٹ شارپ کے دامن کو سر کر رہا ہے جو گیل کریٹر کے فرش سے تین میل کی بلندی پر واقع ہے۔

اس پہاڑ کی سطحی تہوں نے مریخ پر لاکھوں سالوں کی آب و ہوا کی تبدیلی کو ریکارڈ کیا ہے جس سے مریخ پر پانی اور زندگی برقرار رکھنے والے کیمیکلز کے ارتقا کے بارے میں قیمتی اعداد و شمار فراہم ہوتے ہیں۔

روور کا سفر اب اسے سلفیٹ سے بھرپور پرت کی طرف لے گیا ہے، جو آبی ذخائر کے بخارات کی نشاندہی کرتا ہے جب کہ مریخ کے گیلے اور خشک ادوار کے اتار چڑھاؤ کی طرف اشارہ کرتا ہے۔

گیڈیز ویلس کی تلاش ماؤنٹ شارپ کی تشکیل کی مبینہ ٹائم لائن کو نمایاں طور پر تبدیل کر سکتی ہے۔ ہوا اور پانی کی وجہ سے کٹاؤ اور مٹی کے جمع ہونے نے پہاڑ کی ارضیاتی تہوں کو بے نقاب کر دیا ہے۔

تاہم چینل کے اندر پتھروں اور ملبے کی موجودگی سے پتہ چلتا ہے کہ طویل خشک مرحلے کے بعد پانی کے بہاؤ میں دیر سے اضافہ ہوا ہے۔

یہ دریافت کیوروسٹی کے سابقہ نتائج سے مطابقت رکھتی ہے، جس سے پتہ چلتا ہے کہ مریخ کو آہستہ آہستہ خشک ہونے کے بجائے متعدد گیلے اور خشک چکر کا سامنا کرنا پڑا۔

ناسا کی جیٹ پروپلشن لیبارٹری سے تعلق رکھنے والے کیوروسٹی کے پروجیکٹ سائنسدان اشون وساوڈا ان نتائج کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے بتاتے ہیں کہ طویل خشک موسم کے بعد مریخ پر پانی نمایاں انداز میں واپس آیا ہے۔

اس نظریے کی تائید مٹی کی دراڑوں، گہری جھیلوں کی باقیات اور چینل کے نیچے دیکھے گئے تباہ کن ملبے کے بہاؤ کے شواہد سے ہوتی ہے۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top