بدھ، 19-جون،2024
( 13 ذوالحجہ 1445 )
بدھ، 19-جون،2024

EN

کونسا ملک جان لیوا دوائی کو مجوزہ قانونی حیثیت دینے کیلئے تیار؟

29 مئی, 2024 17:40

نیوزی لینڈ: حال ہی میں نیوزی لینڈ کے شہریوں نے ریفرنڈم کے ذریعے یوتھنیزیا (جان لیوا دوائی) کو مجوزہ قانونی حیثیت دینے کے حق میں ووٹ دیا ہے۔

عرب میڈیا کے مطابق حال ہی میں نیوزی لینڈ کے شہریوں نے یوتھنزیا کے حق میں ووٹ دیا ہے جس سے مراد اگر کوئی شخص کسی بیماری کی وجہ سے ’ناقابلِ برداشت تکلیف‘ میں ہے تو اس کی ’خودکشی میں مدد کرنا جرم نہیں ہے‘ کو قانونی حیثیت دینے کے حق میں ووٹ دیا گیا ہے۔

عرب میڈیا کے مطابق جمعے کے روز جاری ہونے والے ابتدائی نتائج سے ظاہر ہوتا ہے کہ وہ ممکنہ طور پر چرس کو قانونی حیثیت نہیں دیں گے۔

مزید پڑھیں:مچھلی تیل کے کیپسول کھانے سے کیا نقصانات ہوسکتے ہیں؟

یوتھیزیا کو قانونی حیثیت دینے میں تقریبا 83 فیصد ووٹوں کی گنتی کے ساتھ نیوزی لینڈ کے شہریوں نے اس اقدام کی پرزور حمایت کی ہے جب کہ 65 فیصد نے اس کے حق میں اور 34 فیصد نے مخالفت میں ووٹ دیا ہے۔

اس سے تھوڑا سا امکان پیدا ہوا ہے کہ اگلے ہفتے تمام خصوصی ووٹوں کی گنتی کے بعد یوتھنزیا کو قانونی حیثیت مل سکتی ہے، حالانکہ اس کے لئے بڑے پیمانے پر تبدیلی کی ضرورت ہوگی۔

گزشتہ انتخابات میں خصوصی ووٹ جن میں غیر ملکی رائے دہندگان کی طرف سے ڈالے گئے ووٹ بھی شامل ہیں۔

عام ووٹوں کے مقابلے میں زیادہ لبرل تھے جس سے چرس کو قانونی حیثیت دینے کے حامیوں کو کچھ امید ملی ہے کہ یہ اقدام اب بھی منظور ہوسکتا ہے۔

چرس کو قانونی حیثیت دینے کے حامی اس بات سے مایوس تھے کہ مقبول وزیر اعظم جیسنڈا آرڈرن نے یہ نہیں بتایا کہ وہ 17 اکتوبر کو ہونے والے انتخابات سے پہلے ووٹ دینے کا ارادہ رکھتی ہیں۔

یہ کہتے ہوئے کہ وہ اس فیصلے کو نیوزی لینڈ کے شہریوں پر چھوڑنا چاہتی ہیں، آرڈرن نے جمعے کے روز نتائج جاری ہونے کے بعد کہا کہ انہوں نے دونوں ریفرنڈم کے حق میں ووٹ دیا ہے۔
حزب اختلاف کی نیشنل پارٹی سے تعلق رکھنے والے کنزرویٹو قانون ساز نک اسمتھ نے چرس کے ابتدائی نتائج کا خیر مقدم کیا ہے۔

تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ بھنگ ذہنی صحت کے مسائل، حوصلہ افزائی اور تعلیمی کامیابی میں کمی اور سڑک اور کام کی جگہ پر اموات میں اضافے کا سبب بنتی ہے۔ نیوزی لینڈ کے باشندوں نے درست طور پر یہ نتیجہ اخذ کیا ہے کہ تفریحی بھنگ کو قانونی بنانے سے یہ معمول پر آجائے گا، اسے زیادہ دستیاب ہوگا، اس کے استعمال میں اضافہ ہوگا اور زیادہ نقصان ہوگا۔

تاہم گرین پارٹی سے تعلق رکھنے والے لبرل قانون ساز کلو سواربرک کا کہنا ہے کہ وہ طویل عرصے سے یہ سوچ رہے تھے کہ ووٹوں کی گنتی قریب آجائے گی اور انھیں خصوصی ووٹوں کی گنتی تک انتظار کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا، ‘ہم شروع سے ہی کہہ رہے ہیں کہ یہ ہمیشہ رائے دہندگان کی تعداد میں کمی آئے گی۔ ہمارے پاس خصوصی ووٹوں کی ریکارڈ تعداد ہے، لہذا میں پرامید ہوں، ’نیوزی لینڈ نے اس ملک میں منشیات کے قوانین کے بارے میں واقعی ایک پختہ اور مسلسل ترقی پذیر بات چیت کی ہے اور ہم گزشتہ تین سالوں میں واقعی بہت آگے آئے ہیں‘۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top