پیر، 22-اپریل،2024
( 12 شوال 1445 )
پیر، 22-اپریل،2024

EN

گیس کی قیمتوں میں اضافہ کیوں ہو رہا ہے، سوئی نادرن نے وجوہات بات دیں

28 مارچ, 2024 22:26

گیس قیمتوں میں تیسری مرتبہ اضافے کی خبروں کے حوالے سے سوئی ناردرن گیس پائپ لائنز لمیٹڈ کا کہنا ہے کہ گیس قیمت میں اضافہ تین وجوہات کی بنیاد پر ہو رہا ہے۔

ایک بیان میں سوئی ناردرن نے کہا کہ گیس کے مقامی ذخائر مسلسل کم ہو رہے ہیں جس کے باعث گھریلو شعبے کو خصوصاً موسم سرما میں آر ایل این جی فراہمی ضروری ہو گئی ہے۔

کمپنی نے کہا کہ آر ایل این جی کی اوسط قیمت تقریباً 3,500 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو جب کہ گھریلو شعبے کی اوسط قیمت فروخت تقریباً 1,100 روپے ہے، اس بنیاد پر 231 ارب روپے کا فرق آ گیا ہے جس کی وجہ سے گیس کی قیمت میں اضافہ لازمی ہے۔

اس کے علاوہ مقامی گیس کے اخراجات میں بھی 69 ارب روپے تک کا اضافہ ہو چکا ہے جب کہدوسری جانب گزشتہ دو برسوں کے دوران ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں 50 فیصد سے زائد کی کمی ریکارڈ کی جا چکی ہے۔

سوئی ناردرن گیس پائپ لائنز لمیٹڈ حکام نے افرادی قوت کے اخراجات کے حوالے سے کہا کہ گیس کی کُل قیمت کا محض 4 فیصد آپریٹنگ اخراجات بشمول افرادی قوت پر مشتمل ہوتا ہے، قیمت کا 94 فیصد حصہ گیس اخراجات جب کہ باقی ماندہ کیپ ایکس پر ریٹرن پر مشتمل ہوتا ہے۔

یہ بات قابلِ ذکر ہے کہ گیس کی قیمتوں میں حالیہ اضافے کے باوجود پروٹیکٹڈ کیٹیگری کے گھریلو صارفین کے لیے گیس کے اوسط نرخ 513 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو ہیں جو اس کی قیمت خرید یعنی 1,674 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو سے کہیں کم ہے۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top