منگل، 21-مئی،2024
( 13 ذوالقعدہ 1445 )
منگل، 21-مئی،2024

EN

مذہبی اقلیتوں کا میڈیا کوریج میں زیادہ نمائندگی کا مطالبہ

28 اپریل, 2024 18:24

امریکی سفارت خانے اور پاکستان یو ایس ایلومنی نیٹ ورک کے اشتراک سے ٹرینیٹی کیتھیڈرل میں ڈائیورسٹی ڈائیلاگز منعقد ہوا جس میں مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے نمائندوں نے پاکستانی میڈیا میں مذہبی اقلیتی رپورٹنگ پر اظہار خیال کیا۔

جی ٹی وی ڈیجیٹل کے مطابق عبادت گاہ ہولی ٹرینیٹی کیتھیڈرل میں ڈائیورسٹی ڈائیلاگز پروگرام کو دو حصوں میں تقسیم کیا گیا، پہلے حصے میں انفرادی تقاریر کا انعقاد ہوا اور دوسرے حصے میں پینل ڈسکشن کی گئیں۔

پاکستان خالصہ سکھ کونسل کے چیئرمین سردار امر سنگھ نے کہا کہ میڈیا اقلیتوں کو درپیش حقیقی مسائل کی کوریج نہیں کرتا۔ ”صرف ہمارے تہواروں کو کور کرنا کافی نہیں ہے۔ سطح کے نیچے جو کچھ ہے اس کے بارے میں کیا خیال ہے؟ انہوں نے جبری مذہبی تبدیلی، کچے کے علاقوں میں  ڈاکوؤں اور اقلیتوں کے مذہبی مقامات پر حملوں کے بارے میں گم شدہ کہانیوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے میڈیا سے پوچھا۔

پاکستان خالصہ سکھ کونسل کے چیئرمین سردار امر سنگھ شرکاء سے خطاب کر رہے ہیں۔
پاکستان خالصہ سکھ کونسل کے چیئرمین سردار امر سنگھ شرکاء سے خطاب کر رہے ہیں۔

پارسی برادری کی نمائندہ توشنا پٹیل نے کہا کہ سب کو مساوی مواقع ملنے چاہئیں، پاکستان میں مختلف عقائد ہیں، دقیانوسی سوچ اور تعصبات معاشرتی تقسیم کو ہوا دے سکتے ہیں۔ ہماری آوازوں کو بڑھا کر، آپ پل تعمیر کرسکتے ہیں اور ہمارے عقائد کے بارے میں بہتر تفہیم پیدا کرسکتے ہیں جبکہ ایک منصفانہ اور جامع دنیا کی تشکیل کے لئے ہمدردی، تفہیم اور کھلے ذہن پیدا کرسکتے ہیں۔

پاکستان پیپلزپارٹی سے تعلق رکھنے والی ایم پی اے روما مشتاق نے کہا کہ وہ اپنی حکومت کی جانب سے اقلیتی مذہبی گروہوں کی حمایت کی یقین دہانی کرا سکتی ہیں۔

ہندو برادری کی نمائندگی کرنے والے رکن قومی اسمبلی کھئیل داس کوہستانی نے کہا کہ وہ پہلے پاکستانی تھے، پاکستان میں کوئی غیر مسلم گورنر یا صدر نہیں ہے، حکومت وفد کو اس بارے میں سوچنا چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ مجھے اقلیت نہ کہیں، مجھے بھی وہی مسائل درپیش ہیں جو آپ کو ہیں جیسے بجلی کی لوڈ شیڈنگ اور پانی کی قلت سمیت کئی مسائل کا سامنا ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ جب ہندوستان کے وزیر اعظم نریندر مودی اپنے ملک میں مسلمانوں کو نشانہ بنانے کے لئے کچھ بھی کہتے ہیں تو اس کا پاکستان میں ہندوؤں سے کوئی لینا دینا نہیں ہے، براہ مہربانی ہمیں مورد الزام نہ ٹھہرائیں اور نہ ہی مودی کے اقدامات کی وجہ سے ہمیں تکلیف پہنچائیں۔

سابق وفاقی وزیر قانون و انصاف بیرسٹر شاہدہ جمیل نے قائد اعظم کی 11 اگست 1947 کی پہلی دستور ساز اسمبلی سے تقریر آغاز کیا جس میں انہوں نے تمام مذہبی اقلیتوں سے کہا تھا کہ وہ اپنے مندروں میں جانے کے لیے آزاد ہیں۔ تقسیم ہند سے پہلے مسلمانوں کو حقیر سمجھا جاتا تھا اور ان کے ساتھ امتیازی سلوک کیا جاتا تھا جس کی وجہ سے دو قومی نظریہ وجود میں آیا، پاکستان کو ایک ایسی سرزمین بننا ہے جہاں کوئی تفریق نہیں ہونی چاہیے۔

ڈائیوسیس آف کراچی و بلوچستان بشپ فریڈرک جان نے کہا کہ سب سے اہم بات چیت کا ذریعہ ہے تاکہ مسائل کی نشاندہی کی جاسکے لیکن انہیں صحیح طریقے سے نشاندہی کرنا بھی اہم ہے۔ کئی بار مجھے ‘اقلیت’ کا لفظ استعمال کرنے پر اعتراض ہوتا ہے۔ ‘اقلیت’، ‘اکثریت’، ‘عدم رواداری’ اور ‘رواداری’ جیسے الفاظ پیچیدگیاں پیدا کرتے ہیں، اس طرح کے الفاظ سے گریز کیا جانا چاہئے۔

اس کے بعد ہونے والی پینل بحث کے دوران منتظم سعدیہ سیمسن نے اپنے پینلز سے اقلیتوں کے مسائل کے موضوع سے متعلق مختلف سوالات پوچھے۔

 

پاکستان ینگ ہندو فورم کے صدر ایڈوکیٹ مکیش کمار کرارا نے کہا کہ میڈیا نے جبری تبدیلی مذہب کے مقدمات کی غلط تشریح کی اور ایسا لگتا ہے کہ لڑکی رضاکارانہ طور پر اسلام قبول کرنے کے لئے عدالت آتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بہت سی اہم چیزوں کو اجاگر کرنے کی ضرورت ہے لیکن میڈیا دکھاتا ہے کہ اکثریت کیا دیکھنا چاہتی ہے۔ ہندو لڑکے مذہب تبدیل کیوں نہیں کرنا چاہتے؟ صرف ہماری لڑکیاں ہی کیوں؟’

اقلیتی حقوق مارچ کی بانی رکن سجل شفیق نے کہا کہ پاکستان میں دیگر مذہبی اقلیتیں بھی موجود ہیں لیکن کسی نہ کسی طرح یہاں کے میڈیا نے صرف عیسائیوں اور ہندوؤں پر توجہ مرکوز کی۔

اقلیتی حقوق مارچ کے ایک اور بانی رکن بھیویش کمار نے کہا کہ پاکستان میں کرسمس کے موقع پر عیسائیوں کے لیے تعطیل صرف اس لیے ہوتی ہے کیونکہ یہ بابائے قوم کا یوم پیدائش بھی ہوتا ہے۔

دی پاکستان ایکسپریس نامی یوٹیوب چینل پر پوڈ کاسٹ  کرنے والے شہزاد غیاث شیخ نے کہا کہ پاکستانی معاشرے میں اخراج کی بنیاد رکھی گئی ہے۔ ”ہم اپنے بچوں کو بتاتے ہیں کہ یہ ملک دو قومی نظریے کی وجہ سے بنایا گیا تھا، کیوں کہ ہم ہندوؤں کے ساتھ نہیں رہ سکتے تھے، جو ہمیں نیچا سمجھتے تھے اور ہمارے ساتھ اچھوتوں جیسا برتاؤ کرتے تھے، ہم اپنے بچوں سے کہتے ہیں کہ وہ اپنے ہندو کلاس فیلوز سے دوستی کریں،جن خیالات پر زیادہ تر لوگوں نے آواز اٹھائی ہے انہیں چیلنج کرنے کی ضرورت ہے۔

پاکستان سول ایوی ایشن اتھارٹی میں ہیومن ریسورسز کی سینئر ڈپٹی ڈائریکٹر اور اقلیتی گروپ کی ایک اور رکن دیپ کرن راجنی نے کچھ عرصہ قبل اپنی چھوٹی بیٹی کو اسکول میں پیش آنے والا ایک واقعہ بیان کرتے ہوئے بتایا کہ جب میری بیٹی پہلی کلاس میں تھی تو ایک ہم جماعت نے اس کے دوستوں سے کہا کہ وہ اس سے بات نہ کریں کیونکہ وہ غیر مسلم ہے، ہم محسوس کرتے ہیں کہ ہم پاکستانی ہیں کیونکہ ہم یہاں پیدا ہوئے تھے، ہم پاکستان کے لیے سوچنا اور کام کرنا چاہتے ہیں لیکن بعض اوقات منفی رویے یا شخص کی وجہ سے اس مثبت سوچ کو نقصان پہنچتا ہے۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top