منگل، 16-اپریل،2024
( 07 شوال 1445 )
منگل، 16-اپریل،2024

EN

لوہے کے ڈبے میں 70 سال جکڑ کر زندگی گزارنے والا وکیل چل بسا

14 مارچ, 2024 15:57

پولیو کا شکار ہونے کے بعد لوہے کی پھیپھڑوں کی مشین کے اندر 70 سال تک رہنے کے بعد امریکی وکیل پال الیگزینڈر 78 سال کی عمر میں ٹیکساس میں انتقال کرگئے۔

یہ بات منگل کے روز پال کے بھائی فلپ کی جانب سے فیس بک پر لکھی گئی ایک پوسٹ میں سامنے آئی جس میں انہوں نے کہا کہ "یہ میرے لیے اعزاز کی بات ہے کہ میں کسی ایسے شخص کی زندگی کا حصہ بنوں جس سے اس کے جیسا پیار کیا جاتا تھا۔ اس نے لاکھوں لوگوں کو متاثر کیا۔ یہ کوئی مبالغہ آرائی نہیں ہے”۔

اس مشہور آدمی کے بارےمیں ہم کیا جانتےہیں؟

پال رچرڈ الیگزینڈر 1946ء میں پیدا ہوا اور اپنے دو بھائیوں نک اور فلپ کے ساتھ ڈیلاس کے ایک پرسکون مضافاتی علاقے میں پلا بڑھا۔

لیکن 1952ء میں جب وہ 6 سال کا تھا اسے ایک لوہے کے سلنڈر کے اندر جکڑ دیا گیا جس نے پورے جسم کو ڈھانپ لیا تھا۔اسے لوہے کے پھیپھڑوں کے نام سے جانا جاتا ہے۔ وہ پولیو کا شکار ہو گیا تھا۔ یہ ایک مہلک بیماری تھی جس کی وجہ سے پچھلے سالوں میں اوسطا سالانہ دس ہزار بچے مفلوج ہو رہے تھے۔

لوہے کا پھیپھڑا ہوا کو پھیپھڑوں میں دھکیلنے کی خاطردباؤ کے لیے استعمال کرتا۔

ماں نے اسے گھر میں پڑھایا:

برطانوی اخبار’ٹیلی گراف‘ کے مطابق اس کی والدہ نے اسے گھر میں پڑھایا اور وہ ذاتی طور پر کلاسوں میں شرکت کیے بغیر ڈیلاس کے ہائی اسکول سے گریجویشن کرنے والا پہلا طالب علم تھا۔

وہ اپنی وہیل چیئر پر اپنے دوستوں کے ساتھ مقامی سینما اور ریستوراں بھی جاتا اور اپنے خاندان کے چرچ بھی گیا۔

قانون کی ڈگری:

الیکزینڈ نے یونیورسٹی میں داخلے کے لیے درخواست دی۔ مسترد ہونے کے دو سال بعد اس نے آخرکار سدرن میتھوڈسٹ یونیورسٹی میں داخلہ لیا۔ اس کے بعد پھر آسٹن لا سکول میں ٹیکساس یونیورسٹی داخلہ لے لیا۔

اس کے بعد اس نے ایک وکیل کے طور پر کام کیا۔ یہاں تک کہ ایک ترمیم شدہ وہیل چیئر پر عدالت میں پیش ہوا جس نے اسے سیدھا رکھا۔ اسے دیکھ بھال کرنے والوں کی ایک ٹیم سپورٹ کرتی۔ اس نے منہ میں چھڑی پر قلم رکھ کر نوٹ لکھے۔

سفر اور عشق کیا:

اس نے ہوائی جہاز کے ذریعے بیرون ملک سفر کیا۔ اسے پیار ملا، حالانکہ اس کا پہلا سنجیدہ رشتہ خراب ختم ہوا۔ اس کی منگنی ایک ایسی عورت سے ہوئی تھی جس سے وہ یونیورسٹی میں ملا تھا۔ جس کا نام کلیئرتھا لیکن اس کی ماں نے سخت اعتراض کیا اور منگنی توڑ دی۔

بعد میں الیگزینڈرنے اپنی نرس کیتھی گینز کے ساتھ تعلق قائم کیا۔ اس نے تجویز کیا کہ وہ اپنی 2020ء کی یادداشت لکھیں۔ تھری منٹس فار اے ڈاگ: مائی لائف ان آئرن لنگ لکھے اور انہیں 5 سال لگے۔

پال کے آخری الفاظ:

پال الیگزینڈرجس نے اپنی بچپن کی خوفناک بیماری کو اپنی زندگی اور اپنے عزائم کو قابو میں نہیں ہونے دیا۔ اس نے اپنے آخری الفاظ میں اس بات پر زور دیا کہ وہ ان چیزوں کو حاصل کرنا چاہتا ہےجن کے بارے میں اسےبتایا گیا تھا کہ وہ حاصل نہیں کر سکا مگروہ اپنے خوابوں کو پورا کرنا چاہتا ہے۔

اس نے مزید کہا کہ "میری کہانی ایک مثال ہے کہ آپ کا ماضی یا یہاں تک کہ آپ کی معذوری آپ کے مستقبل کا تعین نہیں کرتی۔ آپ واقعی کچھ بھی کر سکتے ہیں۔ آپ کو صرف محنت کرنا ہے”۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top