ہفتہ، 20-جولائی،2024
( 14 محرم 1446 )
ہفتہ، 20-جولائی،2024

EN

حکومت نے قرض حاصل کرنے کیلئے آئی ایم ایف سے کیا وعدے کیے؟

20 مارچ, 2024 12:28

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے قرض کی آخری قسط کے لیے حکومت کی جانب سے کیے گئے وعدوں کی تفصیلات بتادیں۔

آئی ایم ایف اور پاکستان کے درمیان آخری قسط کے لیے اسٹاف لیول معاہدہ ہوگیا ہے جوکہ مالیاتی ادارے کے ایگزیکٹو بورڈ کی منظوری سے مشروط ہے۔

اب آئی ایم ایف نے اپنے اعلامیے میں کہا کہ پاکستان کی حکومت نے بجلی اور گیس مہنگی کرنے اور شرح سود برقرار رکھنے کا وعدہ کیا ہے جب کہ فاریکس مارکیٹ میں شفافیت بھی لائی جائے گی۔

مالیاتی ادارے نے پاکستان سے ڈور مور کا مطالبہ کرتے ہوئے نئی شرائط بھی رکھ دی ہیں، آئی ایم ایف نے خسارے کا شکار اداروں کی نجکاری کا پروگرام تیز کرنے، ٹیکسوں کا دائرہ کار بڑھانے اور کم ٹیکس ادا کرنے والے شعبوں پر ٹیکس لگانے کا مطالبہ کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: 

آئی ایم ایف کا ریٹیلرز، رئیل اسٹیٹ اور مینوفیکچر سیکٹر پر ٹیکس لگانے کا مطالبہ

پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان اسٹاف لیول کا معاہدہ طے پاگیا

آئی ایم ایف نے کہا کہ ٹیکس ایڈمنسٹریشن کو بہتر کیا جائے، توانائی شعبہ کی پیداواری لاگت وصول کی جائے، ملکی زر مبادلہ کے ذخائر بڑھانے کے لئے بھی پاکستان اقدامات کرے اور پرائمری بیلنس 401 ارب روپے تک رکھا جائے۔

اعلامیے میں کہا گیا کہ پاکستان بجلی کا ٹرانسمیشن اور ڈسٹریبیوشن کا نظام بہتر کرے، بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں کی انتظامیہ کو بہتر اور خسارے کا شکار سرکاری اداروں میں گورننس کا نظام بہتر کیا جائے گا۔

 

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top